32

پشاورمیں خوفناک خود کش دھماکہ: ایک لیڈر سمیت 20 ہلاک ،پاکستان طالبان نے لی حملے کی ذمہ داری

خبر اردو :
پا کستان میں انتخابی تیاریوں کے بیچ منگل کی رات کو پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کے جلسے میں ہوئے خود کش دھماکے میں بیس ہلاک اور ستر سے زائد زخمی ہوئے ہیں ۔

اطلاعات کے مطابق عوامی نیشنل پارٹی کے جلسے کے دوران ہوئے خودکش دھماکے میں لیڈر ہارون بلور سمیت بیس ہلاک ہوئے ہیں ۔
پاکستان کے مقامی میڈیا کے مطابق خودکش دھماکہ تب پیش آیا جب عوامی نیشنل پارٹی کے کارکنان ایک کارنر میٹنگ کے لئے پشاور کے یکہ توت علاقے میں جمع ہوئے تھے ۔منگل کی رات پیش آئے حادثے میں مرنے والوں کی تعداد تیرہ بتائی گئی تھی ،جو اب بڑھ کے بیس تک ہوئی ہے ،جو مزید برھنے کا امکان ہے ۔جبکہ ریسکیو آپریشن ابھی جاری ہے ۔


جیو نیوز کے مطابق ہارون بلور منگلوار کی رات پونے گیارہ بجے کارنرمیٹنگ میں پہنچے ،جہاں موجود کارکنان نے ان کا استقبال آتش بازی اور نعروں سے کیا ،جس کے بعد ہوئے دھماکے سے مکمل اندھیرا چھا گیا ۔ صوبائی اسمبلی کی نشست پی کے ۷۸ سے انتخابات میں حصہ لینے والے ہارون بلور کو دھماکے میں شدید چوٹیں آئی ،جس کے بعد وہ ہسپتال میں دم توڑ گئے ۔
بم ڈسپوزل سکارڈ کے چیف شفقت ملک کا کہنا تھا کہ دھماکے میں آٹھ کلو کا ٹی این ٹی مواد استعمال کیا گیا تھا۔پولیس نے خوفناک حملے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں ۔


وہیں پاکستانی طالبان نے اس خوفناک حملے کی ذمہ داری لی ہے ۔پاکستان طالبان کے ترجمان محمد خراسانی نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ انہوں نے ہی اے این پی کی ریلی پر حملہ کیا ۔دہشتگردی سے سب سے زیادہ متاثرہ اے این پی پارٹی نے خیبر پختونخواہ میں ۲۰۰۸ سے ۲۰۱۳ تک حکومت کی ،اس سے پہلے بھی ۲۰۱۲ میں ہارون بلور کے والد بشیر احمد بلور ایک خودکش دھماکے میں مارے گئے تھے ،پاکستانی آرمی نے ۲۰۰۹ میں دہشتگردی کو ختم کرنے کیلئے اس صوبے میں بڑا آپریشن شروع کیا تھا ۔

آپ کو بتا دیں ۲۵ جولائی کو پاکستان میں عام انتخابات ہونے والے ہیں،یہ انتخابی ریلی پر دوسرا حملہ ہے ۔اس سے پہلے ۷ جولائی کو خیبر پختونخواہ صوبے کے ایک علاقے میں پاکستانی مذہبی جماعتوں کے مشترکہ اتحاد متحدہ مجلس عمل کی ریلی پر حملہ ہوا ،جس میں ایک امیدوار سمیت سات زخمی ہوئے ۔

پاکستان انتخابات جیسے جیسے قریب آتے جا رہے ہیں ،دہشت گرد انتخابات کو ناکام بنانے کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں ، وہیں پا کستانی آرمی انتخابات کو خوشگوار بنانے کے لئے پاک فوج کے تیسرے حصے کے 371288 اہلکار کو انتخابات کے دوران تعینات کرے گی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں